لاگ ان / رجسٹر
منگل 23 شوال 1443 بہ مطابق 24 مئی 2022
لاگ ان / رجسٹر
منگل 23 شوال 1443 بہ مطابق 24 مئی 2022
لاگ ان / رجسٹر
منگل 23 شوال 1443 بہ مطابق 24 مئی 2022
منگل 23 شوال 1443 بہ مطابق 24 مئی 2022

کیا فرماتے ہیں مفتیانِ کرام مسئلہ ہذا کے بارے میں کہ میرے پاس کمیٹی میں تقریبا ایک لاکھ پچاس ہزار جمع کیا ہوا ہے اور دو لاکھ ادھار ہے۔ مجھ پر قرض ہونے کی بناپر بھی قربانی واجب ہے یا نہیں جبکہ میرے پاس گزر بسر کا کوئی بندوبست بھی نہیں ہے۔ کیا مجھے ادھار لے کرقربانی کرنی ہوگی؟ 

الجواب باسم ملهم الصواب

ذی الحجہ دسویں تاریخ کو اپنے مال کا حساب لگائیں۔ سونا، چاندی، نقد رقم، تجارت کی نیت سے خریدا ہوا مال اور ضرورت سے زائد سامان، ان میں سے جو کچھ آپ کی ملکیت میں موجود ہے، ان کی مجموعی قیمت لگاکر کمیٹی میں جمع شدہ رقم کو مجموعے میں شامل کریں، پھر آپ کے ذمے جو قرض ہے، اس کو اس مجموعے سے منہا کریں، اس کے بعد بقیہ مال کو دیکھیں، اگر وہ نصاب (ساڑھے باون تولہ چاندی) کے بقدر ہے تو آپ کے ذمے قربانی واجب ہے، اگر نصاب سے کم ہے تو آپ کے ذمے قربانی واجب نہیں۔

ولو كان عليه دين بحيث لو صرف فيه نقص نصابه لا تجب (الفتاوی الهندية (5/ 292)

والله أعلم بالصواب

فتویٰ نمبر3054 :

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

لرننگ پورٹل