لاگ ان
جمعہ 15 جمادی الاول 1444 بہ مطابق 09 دسمبر 2022
لاگ ان
جمعہ 15 جمادی الاول 1444 بہ مطابق 09 دسمبر 2022
لاگ ان / رجسٹر
جمعہ 15 جمادی الاول 1444 بہ مطابق 09 دسمبر 2022
جمعہ 15 جمادی الاول 1444 بہ مطابق 09 دسمبر 2022

سوال: حضرت خضر علیہ السلام فرشتہ تھے یا نبی تھے یا ولی؟ ان میں سے راجح قول کیا ہے؟

الجواب باسم ملهم الصواب

حضرت خضر علیہ السلام کے بارے میں تین اقوال بیان کیے جاتے ہیں: (1) نبی تھے۔ (2) ولی تھے۔ (3) فرشتوں میں سے تھے۔

اکثر علماء کرام پہلے قول کو ترجیح دیتے ہیں۔ چنانچہ تفسیر قرطبی میں ہے:

وَالْخَضِرُ نَبِيٌّ عِنْدَ الْجُمْهُورِ. وَقِيلَ: هُوَ عَبْدٌ صَالِحٌ غَيْرُ نَبِيٍّ، وَالْآيَةُ تَشْهَدُ بِنُبُوَّتِهِ لِأَنَّ بَوَاطِنَ أَفْعَالِهِ لَا تَكُونُ إِلَّا بِوَحْيٍ. وَأَيْضًا فَإِنَّ الْإِنْسَانَ لَا يَتَعَلَّمُ وَلَا يَتَّبِعُ إِلَّا مَنْ فَوْقَهُ، وَلَيْسَ يَجُوزُ أَنْ يَكُونَ فَوْقَ النَّبِيِّ مَنْ ليس بنبي. وَقِيلَ: كَانَ مَلَكًا أَمَرَ اللَّهُ مُوسَى أَنْ يَأْخُذَ عَنْهُ مِمَّا حَمَلَهُ مِنْ عِلْمِ الْبَاطِنِ. وَالْأَوَّلُ الصَّحِيحُ، وَاللَّهُ أَعْلَمُ. (تفسیر القرطبی، الکهف: 65)

ترجمہ: اور خضر علیہ السلام جمہور کے مطابق نبی ہیں، اور بعض کے ہاں نبی نہیں بلکہ اللہ کے نیک بندے ہیں، اور (سورہ کہف کی) آیت ان کے نبی ہونے پردلالت کرتی ہے، کیونکہ پوشیدہ حکمتوں پر مشتمل ان کے افعال بغیر وحی کے نہیں ہوسکتے، اور یہ بھی (ان کے نبی ہونے کی دلیل ہے) کہ انسان اپنے سے مرتبے میں بلند شخص سے ہی سیکھتا ہے اور اس کی اتباع کرتا ہے، اور نبی سے بلند مرتبہ غیر نبی کا نہیں ہوسکتا۔ اور بعض کا کہنا ہے کہ وہ فرشتوں میں سے تھے جن کے باطنی علوم کو سیکھنے کا اللہ نے حضرت موسی علیہ السلام کو حکم فرمایا تھا۔ (ان تینوں اقوال میں سے) پہلا قول صحیح ہے۔ واللہ أعلم

قاضی ثناء اللہ پانی پتی رحمہ اللہ نےبھی تفسیر مظہری میں حضرت خضر علیہ السلام کے نبی ہونے کے قول کو راجح قرار دیا ہے:

قال البغوي لم يكن الخضر نبيّا عند اكثر اهل العلم قلت وهذا عندى محل نظر لان العلم- الحاصل للاولياء بالإلهام وغير ذلك علم ظنى يحتمل الخطاء ولذلك ترى تعارض علومهم الملهمة فلو لم يكن الخضر نبيّا لما جاز له قتل نفس زكية بالهام انه لو عاش لارهق أبويه طغيانا وكفرا. (التفسیر المظهری، سورة الکهف: 65)

والله أعلم بالصواب

فتویٰ نمبر4653 :

لرننگ پورٹل