لاگ ان / رجسٹر
ہفتہ 20 شوال 1443 بہ مطابق 21 مئی 2022
لاگ ان / رجسٹر
ہفتہ 20 شوال 1443 بہ مطابق 21 مئی 2022
لاگ ان / رجسٹر
ہفتہ 20 شوال 1443 بہ مطابق 21 مئی 2022
ہفتہ 20 شوال 1443 بہ مطابق 21 مئی 2022

ایک شخص جو کچھ عرصہ قبل اسلام لائے انہیں ایک گناہ کی عادت تھی انہوں نے منت مانی کہ اگر مجھ سے یہ گناہ دوبارہ سرزد ہوگیا تو میں سات دن لگا تار روزے رکھوں گا، اب وہ یہ پوچھنا چاہتے ہیں کہ کیا روزے ہی رکھے جائیں یا اس کا کوئی کفارہ بھی دیا جاسکتا ہے؟ 

الجواب باسم ملهم الصواب

صورت مسئولہ میں جس گناہ کے سرزد ہونے پر سات روزے رکھنے کی نذر مانی ہے تو اس گناہ کے سرزد ہونے پر لگاتار سات روزے رکھناہی لازم ہو گا اس کے بد لے میں کوئی کفارہ لازم نہیں ہوگا۔

(ومن نذر نذرا مطلقا أو معلقا بشرط وكان من جنسه واجب) أي فرض كما سيصرح به تبعا للبحر والدرر (وهو عبادة مقصودة) خرج الوضوء وتكفين الميت (ووجد الشرط) المعلق به (لزم الناذر) لحديث «من نذر وسمی فعليه الوفاء بما سمی» (كصوم وصلاة وصدقة) ووقف (واعتكاف) وإعتاق رقبة وحج ولو ماشيا فإنها عبادات مقصودة (الدر المختار، كتاب الأيمان)

والله أعلم بالصواب

فتویٰ نمبر4257 :

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

لرننگ پورٹل