لاگ ان
جمعہ 15 جمادی الاول 1444 بہ مطابق 09 دسمبر 2022
لاگ ان
جمعہ 15 جمادی الاول 1444 بہ مطابق 09 دسمبر 2022
لاگ ان / رجسٹر
جمعہ 15 جمادی الاول 1444 بہ مطابق 09 دسمبر 2022
جمعہ 15 جمادی الاول 1444 بہ مطابق 09 دسمبر 2022

درج ذیل حدیث ایک خاتون ٹی وی پر بیان کررہی تھیں، خاتون اہل تشیع میں سے معلوم ہوتی ہیں، مزید ان کا دعویٰ یہ بھی ہے کہ یہ حدیث قدسی تمام مکاتب فکر اسلامی کے نزدیک متفق ہے۔

وعزتي وجلالي وارتفاع مكاني وعلو مقامي ان العاق بوالديه لو يعمل باعمال الانبياء جميعا…

’’مجھے میری عزت، جلالت، جبروت، بادشاہی و اقتدار کی قسم کہ جو شخص اپنے ماں باپ کو ناراض کردے اور وہ بغیر توبہ کیے اور ماں باپ کو راضی کیے  مرجائے وہ ایک لاکھ چوبیس ہزار انبیاء کی نیکیاں اپنے دامن میں لے آئے، پھر بھی میں اس کے کسی عمل کو قبول کرنے والا نہیں‘‘۔

الجواب باسم ملهم الصواب

مذکورہ حدیث ذخیرہ احادیث میں تلاش بسیار کے باوجود کہیں نہیں ملی۔ اس لیے اس کے بارے میں تمام مکاتب فکر کے اتفاق کا دعویٰ بے بنیاد ہے۔ ایک دوسری روایت ان الفاظ کے ساتھ مشکاۃ المصابیح میں موجود ہے:

عن ابن عباس قال: قال رسول الله صلی الله عليه وسلم: «من أصبح مطيعا لله في والديه أصبح له بابان مفتوحان من الجنة وإن كان واحدا فواحدا. ومن أمسی عاصيا لله في والديه أصبح له بابان مفتوحان من النار وإن كان واحدا فواحدا» قال رجل: وإن ظلماه؟ قال: «وإن ظلماه وإن ظلماه وإن ظلماه<». (مشکاة المصابيح، كتاب الأدب، باب البر والصلة)

ترجمه: حضرت عبد اللہ بن عباس رضی اللہ عنہما سے مروی ہے کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا کہ جو شخص اپنے والدین کے معاملے میں اللہ کا فرمانبردار ہو تو اس کے لیے جنت کے دو دروازے کھل جاتے ہیں اور اگر وہ والدین میں سے ایک کا فرمانبردار ہو تو جنت کا ایک دروازہ کھلتا ہے، اور جو شخص والدین کے معاملے میں اللہ کا نافرمان ہو تو اس کے لیے جہنم کے دو دروازے کھل جاتے ہیں اور اگر وہ والدین میں سے کسی ایک کا نافرمان ہو تو اس کے لیے جہنم کا ایک دروازہ کھلتا ہے۔ایک شخص نے کہا کہ یا رسول اللہ ﷺ! اگر چہ اس کے والدین اس پر ظلم کرتے ہوں؟ اس پر رسول اللہ ﷺ نے جواب دیا کہ اگر چہ وہ اس پر ظلم کریں، اگر چہ وہ اس پر ظلم کریں، اگر چہ وہ اس پر ظلم کریں۔

والله أعلم بالصواب

فتویٰ نمبر3784 :

لرننگ پورٹل