لاگ ان
بدھ 17 رجب 1444 بہ مطابق 08 فروری 2023
لاگ ان
بدھ 17 رجب 1444 بہ مطابق 08 فروری 2023
لاگ ان / رجسٹر
بدھ 17 رجب 1444 بہ مطابق 08 فروری 2023
بدھ 17 رجب 1444 بہ مطابق 08 فروری 2023

میرا گھر ہے جسے میں کرایہ پر دینا چاہتا ہوں، کیا بینک میں ملازمت کرنے والے شخص کو دے سکتا ہوں؟

الجواب باسم ملهم الصواب

جس شخص کی آمدن حرام ہو اور اس کے بارے میں یقین یا ظن غالب یہی ہو کہ وہ مکان کا کرایہ حرام رقم سے ادا کرے گا اس کو مکان کرایہ پر دینا جائز نہیں، لہذا مروج بینک کے ملازم کو مکان کرایہ پر نہ دیا جائے، ہاں اگر وہ یقین دلائے کہ مکان کا کرایہ کہیں سے حلال رقم لے کر ادا کرے گا تو ایسی صورت میں اس کو کرایہ پر دینا جائز ہوگا۔

قال بعض مشايخنا: كسب المغنية كالمغصوب لم يحل أخذه، وعلی هذا قالوا لو مات الرجل وكسبه من بيع الباذق أو الظلم أو أخذ الرشوة يتورع الورثة، ولا يأخذون منه شيئا وهو أولی بهم ويردونها علی أربابها إن عرفوهم، وإلا تصدقوا بها لأن سبيل الكسب الخبيث التصدق إذا تعذر الرد علی صاحبه اهـ الدر المختار وحاشية ابن عابدين (رد المحتار) (6/ 385)

والله أعلم بالصواب

فتویٰ نمبر4472 :

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے


لرننگ پورٹل