لاگ ان / رجسٹر
منگل 23 شوال 1443 بہ مطابق 24 مئی 2022
لاگ ان / رجسٹر
منگل 23 شوال 1443 بہ مطابق 24 مئی 2022
لاگ ان / رجسٹر
منگل 23 شوال 1443 بہ مطابق 24 مئی 2022
منگل 23 شوال 1443 بہ مطابق 24 مئی 2022

بعض اوقات غسل کرتے ہوئے ناک میں پانی ڈالتے ہوئے محسوس ہوتا ہے کہ کچھ تری سی حلق تک چلی گئی ہو، لیکن جب محسوس ہوا تو کوشش کی کہ کھانس کر اس کو حلق سے نکال دیا جائے۔ لیکن پھر بھی اگر کچھ تری سی اندر جاتی محسوس ہو تو کیا روزہ ٹوٹ جائے گا؟ اگر ٹوٹ جاتا ہے تو اس کی قضا ہوگی؟ اور اگر یہ معلوم نہ ہو کہ کتنے روزوں میں ایسا ہوا توکس طرح قضا ادا ہو گی؟ ناک میں پانی ڈالنے میں کوئی رعایت ہے؟ ورنہ اس میں اندیشہ ہوتا ہے کہ بار بار ایسا ہوگا؟

الجواب باسم ملهم الصواب

روزے کی حالت میں غسل کرتے ہوئے اگر ناک میں  اس طرح پانی ڈالا جائے کہ وہ دماغ یا حلق میں پہنچ جائے تو اس  سے روزہ ٹوٹ جائے گا، اور دماغ تک پہنچنے کا معیار یہ ہے کہ پانی ناک کی نرم ہڈی سے اوپر نہ جائے کیونکہ اگرپانی ناک کی نرم ہڈی سے اوپرچلا جائے تو وہ دماغ تک پہنچ سکتا ہے اس لئے اس میں احتیاط ضروری ہے اور اگر حلق یا دماغ میں نہ پہنچے تو اس سے روزہ فاسد نہیں ہوگا۔

لہذا صورت مسئولہ میں اگر یقین ہو کہ پانی حلق سے نیچے اتر گیا یا دماغ تک پہنچ گیا تو اس سے روزہ فاسد ہو جائے گا، بعد میں کھانس کر باہر نکالنے کا اعتبار نہیں اور اس روزے کی قضاء لازم ہو گی لیکن اگر یہ یاد نہ ہو کہ کتنے روزوں میں اس طرح ہوا تو اندازے سے روزوں کی قضاء  کرنا شروع کریں جب یقین ہو جائے کہ اب سارے روزے پورے ہو گئے تو پھر روزے رکھنا بند کردیں۔ باقی روزے کی حالت میں کلی کرنے اور ناک میں پانی ڈالنے میں مبالغہ کرنا ضروری نہیں بلکہ ہلکی سی کلی کرلینا اور اس طرح ناک میں پانی ڈالنا کہ ناک صاف ہوجائے، کافی ہے۔ ناک میں پانی چڑھانا ضروری نہیں۔

 "و" يسن "المبالغة في المضمضة" وهي إيصال الماء لرأس الحلق "و" المبالغة في "الاستنشاق" وهي إيصاله إلى ما فوق المارن "لغير الصائم" والصائم لا يبالغ فيها خشية إفساد الصوم لقوله عليه الصلاة والسلام: "بالغ في المضمضة والاستنشاق إلا أن تكون صائما " (حاشية الطحطاوي على مراقي الفلاح شرح نور الإيضاح (ص: 70)

وإن تمضمض أو استنشق فدخل الماء جوفه إن كان ذاكرا لصومه فسد صومه وعليه القضاء، وإن لم يكن ذاكرا لا يفسد صومه كذا في الخلاصة وعليه الاعتماد. (الفتاوى الهندية، 1/ 202)

ولو استنشق ووصل الماء إلى دماغه أفطر فجعل الدماغ كالجوف لأن قوام البدن بهما. (تبيين الحقائق، كتاب الصوم، باب مايفسد الصوم وما لايفسده)

والله أعلم بالصواب

فتویٰ نمبر4455 :

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

لرننگ پورٹل