لاگ ان / رجسٹر
ہفتہ 20 شوال 1443 بہ مطابق 21 مئی 2022
لاگ ان / رجسٹر
ہفتہ 20 شوال 1443 بہ مطابق 21 مئی 2022
لاگ ان / رجسٹر
ہفتہ 20 شوال 1443 بہ مطابق 21 مئی 2022
ہفتہ 20 شوال 1443 بہ مطابق 21 مئی 2022

کیا ولیمے کی تقریب سے قبل دلہن کا رخصت ہونا ضروری ہے؟ نیز ولیمے کے درست ہونے کی شرائط کیا ہیں؟ اگر ایک ہی تقریب یعنی ولیمے سے دلہن کو رخصت کردیا جائے تو کیا یہ درست ہوگا؟

الجواب باسم ملهم الصواب

ولیمہ ایک مسنون عمل ہے اس کے صحیح ہونے کے لئے ضروری ہے کہ یہ عمل نام و نمود، دکھلاوے، موسیقی، مووی اور تصاویر، مرد و عورت کے مخلوط اجتماع اور بےجا اسراف سے خالی ہو ورنہ یہ عمل ثواب کے بجائے گناہ کا سبب بنےگا۔

عام طور پر ولیمہ کے نام سے جو کھانا کھلایا جاتا ہے اس کی تین  صورتیں رائج ہیں، پہلی یہ کہ باقاعدہ نکاح کے انعقاد سے پہلے ہی کھانا کھلایا جائے، یہ بالاتفاق ولیمہ مسنونہ نہیں ہے۔ دوسری صورت یہ ہے کہ نکاح اور رخصتی یعنی زفاف کے بعد کھانا کھلایا جائے یہ بالاتفاق ولیمہ مسنونہ ہے اور ولیمہ کا اصل مصداق اور افضل ترین صورت یہی ہے ۔ تیسری صورت یہ ہے کہ باقاعدہ ایجاب و قبول کے ذریعہ نکاح منعقد ہو جانے کے بعد اور رخصتی و زفاف سے پہلے کھانا کھلایا جائے، اس صورت کو بھی فقہائے کرام نے ولیمہ کہا اس لئے نکاح کے بعد اور زفاف سے پہلے کوئی کھانا کھلائے تو اس سے بھی ولیمے کی سنت ادا ہو جائے گی اور ان شاء اللہ ثواب بھی ملے گا۔

وقت الولیمۃ: اختلف الفقھاء فی وقت الولیمۃ: فذھب الحنفیۃ والمالکیۃ فی المشہور وابن تیمیۃ إلی أن الولیمۃ تکون بعد الدخول۔ وقال الشافعیۃ بأن وقت الولیمۃ الأفضل بعد الدخول، وأن وقتھا موسع من حین العقد فیدخل وقتھا بہ۔ ویقرب من ہذا الاتجاہ ماقالہ المرداوی الاولیٰ أن یقال وقت الاستحباب موسع من عقد النکاح إلی انتھاء ایام العرس لصحۃ الأخبار فی ھذا وہذا، وکمال السرور بعد الدخول۔ ولکن جرت العادۃ بفعلها قبل الدخول یسیر. وذهب الحنابلۃ والحنفیۃ في قول والمالکیۃ فی قول کذلک إلی أنہ تسن الولیمۃ عند العقد. ویری بعض الحنفیۃ أن الولیمۃ العرس تکون عند العقد وعند الدخول(الموسوعۃ الفقهیۃ الکویتیۃ، حرف الواو، ولیمۃ، إجابة الدعوة إلی الوليمة، الشروط المعتبرة في الوليمة نفسها، ثانيا: وقت الوليمة) 

والله أعلم بالصواب

فتویٰ نمبر4584 :

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

لرننگ پورٹل